Tuesday, May 28, 2024
ہومپاکستانبجٹ اخراجات کا تخمینہ 24ہزار 710 ارب روپے ہو گا،دستاویزات

بجٹ اخراجات کا تخمینہ 24ہزار 710 ارب روپے ہو گا،دستاویزات

اسلام آباد (آئی پی ایس )پاکستانی حکام اور آئی ایم ایف کے درمیان آئندہ مالی سال 25-2024 کے وفاقی بجٹ سے متعلق اعداد و شمار کا تبادلہ ہوا ہے۔ذرائع کے مطابق آئی ایم ایف کو وفاقی بجٹ کے حجم، اخراجات، ترقیاتی بجٹ، محاصل اور سبسڈیز کی تفصیلات دی گئی ہیں۔

دستاویز کے مطابق آئندہ وفاقی بجٹ میں اخراجات کا ابتدائی تخمینہ 24 ہزار 710 ارب روپے لگایا گیا ہے، جبکہ حکومت کے جاری اخراجات کے لیے 22 ہزار 37 ارب روپے کا تخمینہ ہے۔آئی ایم ایف کو دی گئی دستاویز میں بتایا گیا ہے کہ آئندہ مالی سال وفاقی ترقیاتی بجٹ کا حجم 2 ہزار 590 ارب روپے ہو گا، وفاقی ترقیاتی پروگرام 890 ارب روپے اور صوبائی ترقیاتی بجٹ 1ہزار 700 ارب روپے کا ہو گا۔دستاویز میں کہا گیا ہے کہ پبلک پرائیویٹ پارٹنر شپ کی بنیاد پر ترقیاتی پروگرام کو آگے بڑھایا جائے گا، دفاع کے لیے 2 ہزار 152 ارب روپے مختص ہوں گے۔آئی ایم ایف کو دی گئی دستاویز کے مطابق سود اور قرضوں پر اخراجات کا ابتدائی تخمینہ 9 ہزار 787 ارب روپے ہے، 8 ہزار 517 ارب روپے مقامی اور 1 ہزار 158 ارب روپے غیر ملکی بیرونی قرض پر سود ہو گا۔دستاویز کے مطابق آئندہ وفاقی بجٹ میں سبسڈی کا حجم 1 ہزار 509 ارب روپے لگایا گیا ہے، توانائی کے شعبے کے لیے سبسڈیز کا ابتدائی حجم 8 سو ارب روپے تک ہے۔

بجٹ دستاویز میں کہا گیا ہے کہ آئندہ مالی سال حکومت کی مجموعی آمدن کا تخمینہ 15 ہزار 424 ارب روپے ہے، آئندہ مالی سال ایف بی آر کے ٹیکس محاصل کا تخمینہ 11 ہزار 113 ارب روپے رکھا گیا ہے۔آئی ایم ایف کو فراہم کی گئی بجٹ دستاویز کے مطابق براہِ راست ٹیکسوں کا حجم 5 ہزار 291 ارب روپے رکھے جانے کا امکان ہے، وفاقی ایکسائز ڈیوٹی 672 ارب روپے اور سیلز ٹیکس 3 ہزار 855 ارب روپے رکھنے کا تخمینہ لگایا گیا ہے، کسٹمز ڈیوٹی کی مد میں 1 ہزار 296 ارب روپے وصولی کا تخمینہ لگایا گیا ہے، جبکہ نان ٹیکس آمدن کا ابتدائی تخمینہ 2 ہزار 11ارب روپے تک لگایا گیا ہے۔دستاویز کے مطابق بجٹ میں پیٹرولیم لیوی کی مد میں 1080 ارب روپے کی آمدنی کا اندازہ لگایا گیا ہے، گیس انفرااسٹرکچر ڈیولپمنٹ سر چارج کی مد میں 78 ارب روپے آمدن کا تخمینہ لگایا گیا ہے۔آئندہ مالی سال 25-2024 کا وفاقی بجٹ 7 جون کو قومی اسمبلی میں پیش کیے جانے کا امکان ہے۔

روزانہ مستند اور خصوصی خبریں حاصل کرنے کے لیے ڈیلی سب نیوز "آفیشل واٹس ایپ چینل" کو فالو کریں۔