حکومت سندھ کا کراچی میں 8 اگست تک لاک ڈاؤن لگانے کا فیصلہ 118

حکومت سندھ کا کراچی میں 8 اگست تک لاک ڈاؤن لگانے کا فیصلہ

کراچی ، حکومت سندھ نے کراچی میں 31 جولائی سے 8 اگست تک لاک ڈاون لگانے کا فیصلہ کرلیا۔ جمعہ کے روز سندھ حکومت کی جانب سے لاک ڈاون کے فیصلے بعد وزیراعلیٰ سندھ نے کہا ہے کہ جو ویکیسن نہیں لگائے گا تو اسے 31 اگست کے بعد تنخواہ نہیں دی جائے گی۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ ایکپسورٹ انڈسٹری کھلی رہے گی، ہم اگلے ہفتے سرکاری دفاتر بھی بند کر رہے ہیں۔سندھ بالخصوص کراچی میں کورونا وائرس کے مریضوں کی بڑھتی ہوئی شرح کے پیشِ نظر صوبائی حکومت نے یہ فیصلہ کیا ہے جس کے تحت شہر بھر میں ٹرانسپورٹ اور کاروباری سرگرمیاں بند رہیں گی۔کراچی میں کورونا وائرس کے مریضوں کی شرح 30 فیصد تک جا پہنچی ہے جو ملک بھر میں مریضوں کی شرح سے کئی گنا زیادہ ہے، اسی تناظر میں طبی ماہرین کی آرا کو مدنظر رکھتے ہوئے شہر میں مکمل لاک ڈاون لگایا جا رہا ہے۔وزیرِ اعلی سندھ مراد علی شاہ نے جمعہ کو کورونا کی چوتھی لہر سے بچا ؤکے حوالے سے صوبائی کورونا ٹاسک فورس کے اجلاس کی سربراہی کی جس میں لاک ڈاؤن کا فیصلہ کیا گیا۔وزیرِاعلی سند ھ نے کہا کہ کورونا وائرس تیزی سے بڑھ رہا ہے جس سے بچا ؤکے کے کوویڈ ایس او پیز پر لازمی طور پر عمل کیا جائے۔ عوام کے تعاون سے ہی کورونا وائرس پر کنٹرول کیا جا سکتا ہے،عیدالاضحی کے بعد سے ہی کورونا کی چوتھی لہر کے منفی اثرات سامنے آنے لگے ہیں۔ گذشتہ سات دنوں میں کورونا ٹیسٹ مثبت آنے کی اوسط شرح 24 فیصد کے لگ بھگ ہے۔ایسے میں ڈاکٹروں کی جانب سے بھی مکمل لاک ڈاؤن کی حمایت کی جا رہی ہے۔ سندھ حکومت کے ترجمان اور وزیرِ اعلی کے مشیر مرتضی وہاب نے کہا کہ کورونا سے بچا ؤکے کئے سخت فیصلے ناگزیر ہیں،وزیراعلیٰ سندھ نے اس حوالے سے تمام سٹیک ہولڈرز سے مشاورت کرنے کے بعد ہی یہ اقدام کیا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں