ali jan 9

سنکیانگ حکومت نے غیر ملکی میڈ یا کی تعلیمی و تربیتی مراکز میں طلباء پر ظلم تشدد کی رپو رٹ کو مسترد کر دیا

چین میں قانون کے مطابق قیدیوں کے قانونی حقوق کی حفاظت کی جاتی ہے، سنکیانگ کے تعلیمی اور تربیتی مراکز میں چینی آئین کے بنیادی اصولوں کا احترام کیا جا تا ہے، تر جمان
سنکیا نگ حکو مت

بیجنگ ( ما نیٹر نگ ڈیسک)سنکیانگ ویغور خود اختیار علاقے کی حکومت کے ترجمان علی جان عنائیتی نے غیر ملکی میڈیا کی “سنکیانگ کے تعلیمی و تربیتی مراکز میں طلباء پر ظلم تشدد” با رے نا م نہاد رپو رٹ کو مسترد کر تے ہو ئے کہا ہے کہ یہ رپورٹ مکمل طور پر من گھڑت اور جعلی ہے، چین قانون کی حکمرانی کے تحت کام کرنے والا ایک ملک ہے۔ یہاں مقدمات کی تفتیش کے دوران ، پبلک سیکورٹی اداروں کو غیر قانونی حراست اور تشدد کرنے سے سختی سے منع کیا جاتا ہے۔ پیر کے روز بیجنگ میں سنکیانگ ویغور خود اختیار علاقے کی حکومت کی طرف سے سنکیانگ سے متعلقہ امور پر 57 ویں پریس کانفرنس منعقد ہوئی۔ غیر ملکی میڈیا کی جانب سے ایک ایسے شخص کے توسط سے جو “سنکیانگ میں پولیس افسر رہا ہے” ، ایک نام نہاد رپورٹ جاری کی گئی، جس کا عنوان ہے “سنکیانگ کے تعلیمی اور تربیتی مراکز میں طالب علموں پر ظلم و ستم”، اس رپورٹ کے جواب میں ، سنکیانگ ویغور خود اختیار علاقے کی حکومت کے ترجمان علی جان عنائیتی نے دو ٹوک الفاظ میں کہا: یہ رپورٹ مکمل طور پر من گھڑت اور جعلی ہے! ترجمان نے اس بات پر بھی زور دیا کہ چین قانون کی حکمرانی کے تحت کام کرنے والا ایک ملک ہے۔ یہاں مقدمات کی تفتیش کے دوران ، پبلک سیکورٹی اداروں کو غیر قانونی حراست اور تشدد کرنے سے سختی سے منع کیا جاتا ہے ۔چین میں قانون کے مطابق قیدیوں کے قانونی حقوق کی حفاظت کی جاتی ہے۔دوسرا ، سنکیانگ کے تعلیمی اور تربیتی مراکز میں چینی آئین کے بنیادی اصولوں اور انسانی حقوق کے احترام اور تحفظ کے قوانین کو سختی سے نافذ کیا جاتا ہے ، طلباء کے ذاتی وقار کی مکمل ضمانت دی جاتی ہے ، اور کسی بھی طرح طلباء سے توہین آمیز سلوک اور زیادتی کی سختی سے ممانعت کی جاتی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

رائے کا اظہار کریں