Friday, March 1, 2024
ہومکالم وبلاگزبلاگزسان فرانسسکو سے تعلق رکھنے والے چین اور امریکہ کے لوگوں نے  کیسے دوستی کی کہانیاں لکھی ہیں

سان فرانسسکو سے تعلق رکھنے والے چین اور امریکہ کے لوگوں نے  کیسے دوستی کی کہانیاں لکھی ہیں

سان فرا نسسکو () 

یہ  بات حتمی ہے کہ  ریاست سے ریاست کے تعلقات لوگوں کے درمیان تعلقات ہیں۔آٹھ سال قبل جب چین کےصدر مملکت  شی جن پھنگ نے ریاست واشنگٹن کی مقامی حکومت اور امریکی فیڈریشن آف فرینڈشپ گروپس کی طرف سےامریکہ  کے شہر سیئٹل میں منعقدہ استقبالیہ ضیافت میں شرکت کی تھی، تو انہوں نے  اشارہ دیا تھا کہ چین اور امریکہ کی  دوستی کی بنیاد عوام اور امید نوجوانوں میں ہے۔ آٹھ سال بعد سان فرانسسکو میں، صدر شی نے امریکن فلائنگ ٹائیگرز ، پنگ پانگ ڈپلومیسی، اور ان کے امریکہ کے پہلا دورے  کی مثال کا استعمال کرتے ہوئے  اس بات کو واضح  طور پر بیان کیا تھا  کہ چین امریکہ تعلقات کی بنیاد  عوام کی طرف سے رکھی گئی ہے، دروازے عوام کے ذریعہ کھولے گئے ہیں، کہانیاں لوگ لکھتے ہیں، اور مستقبل عوام کی طرف سے بنایا جاتا ہے۔چین دوستی کا ہاتھ بڑھا رہا ہے اور ہمیں کھلے پن کا رویہ  رکھنا چاہیے۔

ماضی سے حال تک ، عوام سے عوام کے تبادلے ہمیشہ سے چین-امریکہ تعلقات کی ترقی کے لیے ایک ناقابل تسخیر محرک رہے ہیں۔ آج چین امریکہ تعلقات ایک بار پھر کلیدی  موڑ پر پہنچ گئے ہیں۔ امریکہ نے چین کے بارے میں اپنی غلط فہمی کی بنیاد پر چین کے حوالے سے غلط  پالیسیاں اپنائیں، جن کی  وجہ سے چین امریکہ تعلقات سفارتی تعلقات کے قیام کے بعد سے کم ترین سطح پر آگئے۔ “جتنا مشکل وقت ہوگا، اتنا ہی ضروری ہے کہ لوگوں کے درمیان تعلقات کو مضبوط کیا جائے اور لوگوں کے درمیان رابطے کو بڑھایا جائے۔”

جب  افرادی تبادلے ہوتے ہیں تو ان کے ذرائع رکاوٹوں سے پاک ہونے چاہییں ۔ اس بار، چین اور امریکہ   کے سربراہان نے اس بات پر اتفاق کیا ہے کہ دونوں ممالک عملے کے تبادلے کو آسان بنانے اور عوام سے عوام اور ثقافتی تبادلوں کو فروغ دینے کے لیے مزید اقدامات شروع کریں گے، جس میں اگلے سال کے شروع میں پروازوں میں مزید نمایاں اضافہ کرنا بھی شامل ہے۔ چین-امریکہ کے درمیان اعلیٰ سطحی سیاحتی ڈائیلاگ، اور ویزا درخواست کے عمل کو بہتر بنانا۔ 

چین اور امریکہ کے عوام کے درمیان تبادلوں میں، ہمیں اختلافات کو ایک طرف  رکھتے ہوئے مشترکہ بنیادوں کو تلاش کرنا چاہیے اور تعاون کی فہرست کو بڑھانا چاہیے۔

سان فرانسسکو میں ہونے والی ملاقات کے دوران چین اور امریکہ کے سربراہان نے مصنوعی ذہانت سے متعلق بین الحکومتی مکالمہ قائم کرنے پر اتفاق کیا جس سے دونوں ممالک کے درمیان سائنسی اور تکنیکی تعاون اور اطلاق کو فروغ ملے گا۔

چین امریکہ تعلقات کی امید لوگوں میں ہے،اور   بنیاد بھی  لوگوں میں ہے، اور مستقبل نوجوانوں میں ہے ۔سان فرانسسکو  چین اور امریکہ کے  عوام کی دوستی   کی تاریخ کا گواہ ہے۔ اور اب یہ چین امریکہ عوام سے عوام کے تبادلے کے نئے آغاز کا مشاہدہ کر رہا ہے۔ حالات کیسے بدلیں، چین اور امریکہ کے عوام کی تبادلے اور تعاون کی خواہش میں کوئی تبدیلی نہیں آئے گی۔ سان فرانسسکو میں دوبارہ آغاز کرتے ہوئے، زیادہ سے زیادہ لوگ چین امریکہ تعلقات کی حوصلہ افزائی کر رہے ہیں۔ یہ چین امریکہ تعلقات کی بہتری اور ترقی کے لیے سب سے مضبوط قوت ہے۔